اقبال کی نظر میں نوجوان کا کردار

کون ہے جو شاعرِ مشرق  ڈاکٹر علامہ محمد اقبال سے واقف نہیں۔ بلاشبہ ہر شعور وادراک رکھنے والا شخص ان کی رفعت و عظمت

کا معترف ہے۔

شک نیست کہ نوجوان قوم کا مستقبل ہیں۔قوم کی ترقی کا تصور نوجوان کی جدوجہد کے بغیر ناممکن ہے۔ شومئی قسمت کہ وطنِ

عزیز کے نوجوان پریشان اور مایوس ہیں۔ اس صورتِ حال میں پاکستان کی ترقی کا خیال بے سود ہے۔راقم الحروف کا خیال ہے کہ اگر نوجوان آج اقبال کا دامن تھام لیں تو اقبال انہیں پریشانی اور مایوسی کی دلدل سے نکال کر اعتماد اور یقین کی دنیا میں لے آئے گا۔

علامہ اقبال نے نوجوان کا ایک مثالی اور ط ُرفہ کردار امتِ مسلمہ کے اذہان میں روشن کیا ہے۔اقبال کا نوجوان مردِ مومن ہے جس کی فطرت میں نور ہے. جو قوم کو تاریکیوں سے نکالنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے

اور یہ ایک خدائی صفت ہے۔اقبال کا نوجوان ذاتی خواہشات و مفادات سے بالا تر ہے، اسکا مقصد مخلوقِ خدا کی بہتری اور بھلائی کے لئے کام کرنا ہے۔اقبال   ”مسجدِ قرطبہ“ میں نوجوان کا کردار اور صفات ان الفاظ میں پیش کرتا ہے:

                                                                ہاتھ ہے اللہ کا،  بندۂ مومن کا ہاتھ

                                                                غالب وکارآفرین،کارکشا،کارساز

                                                                خاکی ونوری نہاد، بندۂ مولا صفات

                                                                ہر دو جہاں سے غنی اسکا دلِ بے نیاز

                                                      اقبال نے نوجوان کو’شاہین ‘ کہہ کر مخاطب کیا ہے۔ اقبال کا نوجوان شاہین کی مانند خوددار، غیرت مند، طاقت ور، اور تیز نگاہ رکھنے والا ہے.اور جس طرح شاہین دوسرے جانوروں کا شکار کیا ہوا نہیں کھاتا، بالکل اسی طرح اقبال کا نوجوان دوسروں پر انحصار کرنے کے بجائے خود جدوجہد کر کے اعلیٰ مقام و مرتبہ حاصل کرتا ہے۔ اقبال فرماتے ہیں:

                                                                عقابی روح جب بیدار ہوتی ہے جوانوں میں

                                                                نظر آتی ہے  ان کو  ا پنی منزل  آسمانوں میں

اقبال نوجوان سے اس لئے محبت کرتا ہے کہ وہ ناممکن کو ممکن بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ اقبال اپنی محبت کا اظہار یوں کرتا ہے:

                                                                محبت مجھے ان جوانوں سے ہے

                                                                ستاروں  پہ  جو  ڈالتے ہیں کمند

                                                             شاعرِ مشرق نوجوان کو اعلیٰ کردارکے ساتھ ساتھ اعلیٰ مقام حاصل کرنے کی نصیحت اشعار کی صورت میں کرتا ہے اور اسے یاد دلاتا ہے کہ وہ مثلِ شاہین امتیازی حیثیت کا مالک ہے۔لہذا اسے اپنی شخصیت کے تمام پہلو ؤں کو اوجِ کمال تک پہنچانا ہے، اور اسے اپنی سوچ کو بلند رکھنا ہے۔ اس ضمن میں اقبال کہتا ہے:

                                                                                                نہیں  تیرا  نشیمن  قصرِ سلطانی  کے  گنبد پر

                                                                                                تو شاہیں ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں میں

اقبال کے نوجوان کے بلند مرتبہ ہونے کا ایک سبب یہ ہے کہ وہ لاالہ کا ورد کرنے والا ہے کیونکہ اقبال نے اسے درس دیا ہے کہ

یہ مال و دولتِ دنیا یہ رشتہ و پیوند

بتانِ  وہم و گماں  لا ا لہ الا اللہ

اقبال کے نوجوان کی کلی بادِ نسیم سے کھِلی ہوئی ہے۔وہ  لاالہ کے نور سے باطل کے اندھیرے مٹانے والا ہے،اور حق کا پرچار کرنے والا ہے کہ اقبال نے اسے نصیحت کی

                                                                باطل دوئی پسند ہے حق لاشریک ہے

                                                                شرکت  میانۂِ  حق و باطل نہ کر قبول

پس اقبال کا نوجوان جب دل کی گہرائی سے وردِ لاالہ کرتا ہے تو اس کے کردار  اور  روح  سے لاالہ کی خوشبو اٹھتی ہے اور اردگرد کی فضا کو معطر کر دیتی ہے۔

علاوہ از ایں، اقبال کا نوجوان تصورِ خودی کا نمائندہ و فرستادہ ہے۔ وہ خودشناسی سے خدا شناسی تک کا سفر طے کرتا ہے۔ اگر عصرِ حاضر کے نوجوان اقبال کے تصورِ خودی کو صحیح معنوں میں اجاگر کریں تو یہ قو م ہر اندرونی و بیرونی دشمن عناصرکا مقابلہ ہمت کے ساتھ کر سکے گی کیونکہ

                                                                اس  قوم  کو  شمشیر کی حاجت نہیں رہتی

                                                                   ہو جس کے جوانوں کی خودی صورتِ فولاد

ٓآخر ‏‏‏‏‏‏میں ،  عصرِ حاضر کے نوجوان کو نصیحت کرنا چاہوں گا کہ اپنے کردار کو اقبال کے پیش کردہ نوجوان کے مثالی کردار کے مطابق ڈھالیں ، اور بین الاقوامی، ملکی، اور سماجی سطح پر قومی مقاصد اور قومی ترقی کی خاطر اپنے آپ کو دوسری اقوامِ عالم پر غالب لانے کی بھرپورکوشش کریں، اور اس ایسا مثالی معاشرہ قائم کرنے کے لئے جدوجہد کریں جو امن، سلامتی، برداشت،رواداری،اعلیٰ ظرفی،  طُرفہ کردار، اخوت، سخاوت، اتحاد،  اور محبت جیسی عظیم صفات کا استعارہ ہو۔

                                                                                                                                                                                (مضمون نگار:  اسد الرحمن)

Add a Comment

Your email address will not be published.